سہ ماہی صدائے لائبریرین جلد3، شمارہ2

صدائے  لائبریرین  کا  یہ  شمارہ  نکالنا  ہمالیہ  پیمائی سے  کچھ  کم  نہ  تھا۔

27۔اپریل  کی    شب  انجائنہ  کا  حملہ  ہوا  جس  کے  نتیجے  میں  تین  ہفتے  کے  لئےبستر  پر  آرام  کرنا  پڑا۔ایسی  حالت  میں  لگتا  نہیں  تھا  کہ  یہ  شمارہ  وقت  پر  نکل  سکے  گا  ۔بستر  پر  لیٹے  لیٹے  لیپ  ٹاپ  گود  میں  لے  کر  روزانہ  کی  بنیاد  پر  تھوڑا  تھوڑا  کام  کرنا  شروع  کیا  ۔  کچھ  پیاروں  کی  ہمسری  نے  ہمت  بندھائی  اور  ہمالیہ  جیسی  کٹھن  یہ  راہگزر  طے  ہو  پائی۔نائیلہ  نے  رفیق  حیات  ہونے  کا  حق  اداکر  دیا۔ڈاکٹر  غنی  الاکرم  سبزواری  صاحب  اور  ڈاکٹر  نسیم  فاطمہ  صاحبہ  کی  شفقت  اور  دلجوئی  بھی  شامل  حال  رہی۔ڈاکٹر  نسرین  شگفتہ  اور  ڈاکٹر  آمنہ  خاتون  کی  دعائیں  بھی  رنگ  لائیں  اور  بہت  سے  لوگوں،  جن    کا  نام  لکھنے  سے  یہ  فہرست    طوالت  اختیار  کر  جائے  گی،کی  مسلسل  دعائوں  کا  اثر  تھا  کہ  اللہ  تعالی  نے  اپنا  فضل  فرمایا  ۔مجھے  نئی  زندگی  عطا  ہوئی  اور  یہ  شمارہ  بروقت  تکمیل  کو  پہنچا۔میں  اپنے  ان  تمام  بزرگوں  ،  دوستوں  اور  پیاروں  کا  شکر  گزار  ہوں  اور  ان  کی  دنیا  اور  آخرت  کی  فلاح  کے  لئے  دعا  گو  ہوں۔

اس  شمارے  کے  لئے  ہمیں  بہت  سی  تحریریں  ملیں۔  ہم  نے  کوشش  کی  کہ  زیادہ  سے زیادہ    تحریروں  کو  اس    کا  حصہ  بنایا  جا  سکےلیکن  ہم  معذرت  خواہ  ہیں  کہ  ہم  ایسا  نہیں  کر  سکے۔کچھ  تحریروں  کو  بوجوہ  شامل  نہیں  کیا  جا  سکا۔ان  میں  گرامر  اور  کمپوزنگ  کی  بہت   غلطیاں  تھیں  جن  کی  تصحیح  کر  کے  اشاعت  کے  قابل  بنانا  کافی  مشکل  اور  وقت  طلب  مرحلہ  تھا۔امید  ہے  اگلے  شمارے  میں  ان  کی  نوک  پلک  سنوار  کر  شامل  کر  دیا  جائے  گا۔تاہم  معزز  لکھاریوں  سے  گزارش  ہے  کہ  وہ  اپنی تحریر کی املاء  اور  گرامر  ہمیں  ارسال  کرنے  سے  پہلےاچھی  طرح  سے  دیکھ  لیا  کریں  ۔  بعض  اوقات  انہوں  نے  خود  تو  ٹھیک  لکھا  ہوتا  ہے  لیکن  کمپوزر  سے  کمپوز  کرواتے  وقت  اس  میں  بے  شمار  اغلاط  شامل  ہو  جاتی  ہیں  جن  کی  تصحیح  بہر  حال  ضروری  ہوتی  ہے۔اگر  آپ  اس  مسودے  کو  ہمیں  ارسال  کرنے  سے  پہلے  ایک  نظر  دیکھ  لیا  کریں  تو  ہمارا  بہت  سا  وقت  اور  محنت  بچ  جایا  کرے  گی۔اس  کے  علاوہ  تحقیقی  مضامین  کے  ساتھ  حوالہ  جات  کا   ذکر   کرنا  مت  بھولیں  ۔

ہمیشہ  کی  طرح  میرے  رفقاء  کار  میں  سے  مس  سارہ  الطاف  اور  محترمہ  ڈاکٹر  نسرین  شگفتہ  صاحبہ  نے  اس  شمارے  کی  تیاری  میں  بڑی  محنت  اور  عرق  ریزی  سے  کام  لیا  ۔اللہ  تعالی  انہیں  اس  کے  بدلہ  میں  جزائے  خیر  سے  نوازے۔  آمین

اسی  سہ  ماہی  میں  سندھ کے تعلیمی ماہراورتاریخ دان ڈاکٹراللہ رکھیو بُٹ70 سال کی عمرمیں جامشورومیں انتقال کرگئے۔ ڈاکٹراللہ رکھیو بُٹ نے  1984 میں برطانیہ سے لائبریری سائنس میں پی  ایچ  ڈیکی ڈگری حاصل کی۔وہ  شعبہ لائبریری سائنس، جامعہ سندھ جامشورو میں استاد کے فرائض بھی  سرانجام دیتے  رہے۔ مرحوم چارکتابوں کے مصنف تھے۔ جن میں سندھی رسالوں کی تاریخ،سندھی اشاعت اورطباعت کی تاریخ،مرزاقلیچ بیگ کی ببلیوگرافی   شامل  ہیں۔اس  کے  علاوہ   بڑی تعداد  میں تحقیقی مقالوں  کے  بھی  حامل  تھے۔ صدائے لائبریرین کی ٹیم ڈاکٹراللہ رکھیوربُٹ کی رحلت  پر  سوگوار  ہے  اور  ان  کی مغفرت  اور  نجات  کے  لئے  دعا  گو  ہے۔

میگزین پڑھنے یا ڈاؤن لوڈ کرنے کے لئےتصویر پر کلک کریں

 

Leave a Reply

Your email address will not be published.