سہ ماہی صدائے لائبریرین جلد3، شمارہ 1

صدائے  لائبریرین  کا  یہ  شمارہ  ہم  ادارہ  فروغ  کتب  خانہ(لائبریری  پروموشن  بیورو)کے  نام  کرتے  ہیں۔

                 لائبریری پروموشن بیورو ۱۹۶۶ء میں قائم ہوا اور ۲۰۱۶ء میں اس کے پچاس سال مکمل ہوگئے۔ یہ  پچاس  سال  ادارے  کے  سربراہ  ڈاکٹر  غنی  الاکرم  سبزواری  صاحب  اور  ان  کے  رفقاء  کے  خلوص  اور    انتھک  مخلصانہ  کوششوں  کا  منہ  بولتا  ثبوت  ہیں۔اس  ادارے  کا  آغاز  ایک  ناشر  کے  طور  پر  ہوا  اور  اس  نے  کتب  خانوی  مواد  کے  ضمن  میں  کتابیں  اور  رسالے  شائع  کرنا  شروع  کئے۔یہ  پاکستان  میں  کتب  خانوی  مواد  کی  اشاعت  کا  واحد  ادارہ  ہے  جو  کہ  اب  تک ۵٦  اردو  اور  ۲٦  انگریزی  کتابیں  شائع  کر  چکا  ہے۔ناشر  کے  ساتھ  ساتھ  یہ  ایک  تحقیقی  ادارے  کا  کردار  بھی  بخوبی  نبھا  رہا  ہے۔  اس  کے  انتظامی  عملے  میں  تین  پی  ایچ  ڈی    اور  تین  ہومیو  پیتھک  ڈاکٹر  شامل  ہیں۔یہ  حضرات  ہائر  ایجوکیشن  کمیشن  سے  ہونے  والی  تحقیق  کے  نگران  اورممتحن  رہے  ہیں۔اس  ادارے  کے  تحت  جو  مطبوعات  شائع  ہوئیں  ان  میں   تحقیقی  موضوعات  مثلاً   بچوں  کے  کتب  خانے،سکول  کے  کتب  خانے،دستاویزات  ،اردو  مخطوطات  کی  کیٹلاگ  سازی،  شخصی  کتب  خانے  کے  موضوعات  شامل  ہیں۔اردو  میں  پی  ایچ  ڈی  کے  مقالے بھی شائع  کئے  گئے۔

اس  وقت  پاکستان  میں  لائبریر  ی  و  انفارمیشن  سائنس  کا  کوئی  ایک  بھی  استاد  ایسا  نہیں  ہے  جس  کے  تحقیقی  مقالات  اس  ادارے  کے  جرنل  میں  شائع  نہ  ہو  چکے  ہوں۔وہ  تمام  لوگ  جو  پی  ایچ  ڈی  یا  ایم  فل  کر  رہے  ہیں  ان  کے  بھی  مقالات  پاکستان  لائبریری  اینڈ  انفارمیشن  سائنس  جرنل  مسلسل  شائع    کر  کے  تحقیق  کی  مدد  کر  رہا  ہے۔اس  کے  ادارتی  بورڈ  پر  نظر  ڈالیں  تو  زیادہ  تر  ڈاکٹرز  تمام  شعبہ  جات  علم  کتب  خانہ  و  اطلاعاتی  سائنس  کے  شامل  ہیں۔

اس  ادارے  نے  لائبریری  حوالہ  جاتی  مواد  کی  کمی  کو  محسوس  کرتے  ہوئے  فراہنگ  ،  ڈائریکٹریاں،  اشاریے  اور  کتابیات  مرتب  کیں۔خصوصاً  جشن  طلائی  کے  موقع  پر  ۵۰  سالہ  اشاریہ  کا  اجراء  بھی  تحقیق  کے  کام  میں  سہولت  اور  معاونت  کے  لئے  مرتب  کیا  گیا۔

تحقیقی  طریق  کارپر  مضامین  و  کتابیں  شائع  ہوئیں  جنہوں  نے  نئے  محقیقین  کی  راہبری  کی  ۔  پاکستان  میں  لائبریری  تحقیق  پر  مسلسل  اداریے  لکھے  گئے۔

عموماً تحقیقی  ادارے  سرکاری  سرپرستی  میں  پروان  چڑھتے  ہیں  لیکن  نہ  تو  اس  ادارے  کو  کوئی  مالی  امداد  ملتی  ہے  نہ  ہی  کارکنوں  کو  کوئی  مشاہرہ  ۔تعاون  باہمی  کی  طرز  پر  اس  ادارہ  نے  تحقیقی  و  تصنیفی  ثقافت  کا  جو  پودا  لگایا  تھا  آج  وہ  گھنا  سایہ  دار  درخت  بن  چکا  ہے ۔

خلوص،لگن  اور  علم  وتحقیق  کی    پچاس  برسوں  پر  محیط  یہ  عظیم  داستان  اخباری  تراشوں  ،  دکھاوے  اور  لالچ  سے  یکسر  مبرا  ہے۔لیکن  افسوس  اس  ادارے  نے    علم  اور  تحقیق  کے  لئے  جو  خدمات  سر  انجام  دیں  ان  کو  ہم  نے  فراموش  کر  دیا۔ہم  میں  سے  کتنوں  کو  معلوم  ہے  کہ  چھ  فروری  2016ء  کو  اس  عظیم  ادارے  کی  پچاسویں  سالگرہ  تھی  اور  جن  کو  معلوم  ہے  ان  میں  سے  کتنوں  نے  اس  کی  سالگرہ  پر  اس  کی  خدمات  کو  سراہا؟خیر  ہم  سراہیں  بھی  تو  کیوں  ہمیں ”انہوں“  نے  تو  لائبریری  پروموشن  بیورو  کی  تعریف  کرنے  کے  لئے  کہا  ہی  نہیں۔ان  کے  کہنے  پر  ہم  چودہ  فروری  کو  بابا  ویلنٹائن  کا  عرس  منا  چکے  اور  اب  23اپریل  کو  حضرت  ولیم  شیکسپئر  کی  برسی  پر  ورلڈ  بک  ڈے  منائیں  گے۔

  کوئ  سمجھ  سکتا  ہے  تو  سمجھ  لے  ہم  پر  اللہ  کے  رسول  صلی اللہ علیہ و  آلہ  وسلم کی  حدیث  صادق  آچکی۔ حضرت ابوہریرہ رضی  اللہ  عنہ سے  مروی  ہے کہ رسول اللہ  صلی اللہ علیہ و  آلہ  وسلم نے فرمایا ضرور تم اپنے سے پہلے کے لوگوں  (یہود  ونصاری) کی پیروی کرو گے بانہہ در بانہہ  ،ہاتھ در ہاتھ اور بالشت دربالشت حتی کہ اگر وہ کسی گوہ کے بل میں داخل ہوئے ہوں گے تو تم بھی داخل ہو جاؤ گے۔ (ابن ماجہ)

اگرہمیں  واقعی   کتابوں  سے  اس  قدر  محبت  ہوتی  جتنا  کہ  ہم  ظاہر  کرتے  ہیں  تو  ہم  اس  دن  کو  ولڈ  بک  ڈے    کے  طور  پرمناتے   جس  دن  اللہ  کی  کتاب  کا  نزول  ہواکیونکہ  اس  زمین  پر  کہیں  علم،امن   اور  آشتی  ہے  تو  اس  کتاب  کی  بدولت  ہے  اور  کہیں  جہالت  کا  اندھیرا  ہے  تو  اس  سے  دوری  کی  بنا  پر  ہے۔

ہمیں  ڈاکٹر  غنی  الاکرم  سبزواری  صاحب  اور  ان  کے  رفقاء  سے  صرف  اتنا  کہنا  ہے  ”جس  کا  عمل  ہے  بے  غرض  اس  کی  جزا  کچھ  اور  ہے“۔فرضی  کارناموں  کی  بنیاد  پر  اخباری  تراشوں  اور  میڈیا  کی  چکا  چوند  میں  خوش  ہونے  والے  کیا  جانیں  پروردگار  عالم  کو  خلوص  کا  ایک  حقیر  سا  عمل  اور  چھوٹا  سا  لمحہ    بھی  تمام  دنیا  سے محبوب  تر  ہے  اور  یہاں  تو  پچاس  برس  پر  محیط  آپ  کے  کارنامے  ہیں  اور  اللہ  کا  آپ  سے  وعدہ  ہےکہ:

 ولا تهنوا ولا تحزنوا وأنتم الأعلون إن كنتم مؤمنين(آل  عمران،آیت  139)

[ترجمہ]تم  حوصلہ  نہ  ہارو  اور  نہ  ہی  غمگین  ہو،تم  ایمان  کا  دامن  نہ  چھوڑناتم  ہی  سربلند  رہو  گے۔

       ہندوستان  میں  ہر  سال  ۱۲  اگست  کو رنگا  ناتھن  کا  یوم  پیدائش  ہندوستان  کا  لائبریری  ڈے  بن  سکتا  ہے  تو  پھر  ڈاکٹر  غنی  الاکرم  سبزواری  کی  پاکستانی  لائبریرین  شپ  کے  لئے  خدمات  تو  بہت  زیادہ  ہیں۔ان  خدمات    کے  عوض  ان  کے  یوم  پیدائش  کو  بھی  پاکستان  میں  لائبریری  ڈے  کے  طور  پر  منایا  جا  سکتا  ہے۔  لیکن  شاید  نہیں  کیونکہ  ہماری  عادت  حسین  کے  نعرے  لگا  کر  یزید  کا  ساتھ  دینے  کی  ہے۔شاید  ہم  سے  ایسا  نہ  ہو  پائے۔

میگزین پڑھنے یا ڈاؤن لوڈ کرنے کے لئےتصویر پر کلک کریں

Leave a Reply

Your email address will not be published.