سہ ماہی صدائے لائبریرین جلد2، شمارہ4

لائبریرین  شپ  کا  پیشہ  اس  وقت  جن   گونا  گوں  مسائل  سے  دوچار  ہے  ان  میں  نمایاں  ترین  ملازمتوں  کا  فقدان  ہے۔2001ء کے  دورا ن  پنجاب  یونیورسٹی  لاہور  کے  شعبہ  عمرانیات  کے  کچھ  محققین  نے  یونیورسٹی  کے  مختلف  شعبوں    کے  طلباءمیں  ملازمت  کے  حوالے  سے  پائی  جانے  والی مایوسی  Job Frustrationپر  ایک  سروے  کیاتھا۔اس  سروے  کے  نتائج میں  حیرت  انگیز  طور  پر  سامنے  آیا  تھا  کہ  شعبہ  لائبریری  و  انفارمیشن  کے  طلباء  میں  ملازمت  کے  حوالے  سے  مایوسی  کی  شرح  نہ  ہونے  کے  برابر  ہے۔لیکن    گذشتہ  برسوں  میں  اس  مایوسی  میں  بےپناہ    اضافہ  ہوا  ہے  اور  یہ اضافہ آنے  والے  ہر  دن  کے  ساتھ  دو  چند  ہوتا  چلا  جارہا  ہے۔بات  یہیں  پر  ختم  نہیں  ہوتی  بلکہ  جن  کے  پاس  ملازمتیں  ہیں  وہ  بھی  غیر  یقینی  صورتحال  سے  دو  چار  ہیں۔حکومتی  اداروں  سے  وابستہ  پروفیشنلز  کے  لئے  پے  سکیل  وہ  نشتر  ہے  جو  ان  کے  وجود  کو  مسلسل  چھلنی  کرتا  رہتا  ہے۔دوسری  طرف  نجی  اداروں  میں  کام  کرنے  والے  پروفیشنلز  ہیں  بلیک  میل  ہونا  جن  کا  مقدر  بن  چکا  ہے۔

اس  کے  علاوہ  ہماری  بے  شمار    لائبریریاں  بنیادی  انفرا  سٹرکچر  سے  ہی  محروم  ہیں۔ان  میں  سے  کچھ  میں  تو  پیشہ  وارانہ  عملہ  ہی  موجود  نہیں  اور  باقی  لائبریریاں  مویشیوں  کا  چارہ  رکھنے  کے  کام  آتی  ہیں۔مزید  بر  آں  علوم  شرقیہ  کے  لئے  ہمارے  پاس  درجہ  بندی  کا  کوئی  مناسب  نظام  نہیں  ہے۔ہمارے  ہاں  مروج  میلول  ڈیوی  کی  درجہ  بندی  کا  نظام  اردو،  فارسی  اور  عربی  کے  مواد  کے  لئے  بالکل  ناکافی  ہے۔ایک  اور  مسئلہ  جس  کا  مظاہرہ    آئے  دن  ہوتا  رہتا  ہے  وہ  یہ  کہ  ہمارا  پیشہ  ضابطہ  اخلاق  سے  محروم  ہے۔اگر  یہ  ضابطہ  اخلاق  کہیں  موجود  ہے  تو  وہ  منہ  ڈھانپے  سو  رہا  ہے  کیونکہ  بظاہر  ہمارے  ہاں  جنگل  کے  قانون  کی  طرح  جس  کی  لاٹھی  اس  کی  بھینس  کا  نظام  رائج  ہے  جہاں  جس  کا  جب  جی  چاہتا  ہے  دوسرے  کی  پگڑی  اچھال  سکتا  ہے  ۔جس  کے  پاس  تھوڑا  سا  اختیار  آجاتا  ہے  وہ  دل  کھول  کرکمزورکےحقوق  غصب  کرتا  ہے۔

ایسے  اور   بے  شمار  مسائل  جن  کا  ذکر  ہم   صدائے  لائبریرین  کے  ان  صفحات  پر  اور  اپنی  ویب  سائٹ  پر  وقتافوقتاکرتے  رہتے  ہیں  اس سے   ہمارا  مقصد  کسی  کی  دل  آزاری  یا  کسی  کو  نیچا  دکھانا  نہیں  ہوتا  بلکہ  ان  مسائل  کی  طرف  ہمارے  با  اختیار  طبقے  کو  متوجہ  کرنا  ہوتا  ہے   جو  کسی  نہ  کسی  وجہ  سے  ان  مسائل  سے  روگردانی  کئے  ہوئے  ہیں۔  ابھی چند  ہفتے  پہلے  کی  بات  ہے  صوبہ  پنجاب  کے  مختلف  کالجوں  میں  ہمارے  کچھ  پروفیشنلز  کی  تعینا  تیاں ہوئیں۔ستم  ظریفی  یہ  ہوئی  کہ  جب  یہ  لوگ  اپنے  متعلقہ  کالجوں  میں  جوائننگ  دینے  گئے  تو  ان  کو  مضحکہ  خیز  جوابات  سننے  کو  ملے۔مثلاہمارے  پاس  تو  لائبریری  سائنس  کی  کلاسیں  ہی  نہیں  ہو  رہیں،  ہمیں  ٹیچر  کی  ضرورت  نہیں  اس  لئے  آپ  لائبریری  سنبھالیں،  ہمارے  پاس  تو  لائبریرین  بھی  ہےاس  لئے  سوری  آپ  واپس  جائیں،  وغیرہ  وغیرہ۔کیا  ان  پروفیشنلز  کی  داد  رسی  ضروری  نہیں  تھی؟ہمارے  واویلا  کرنے  کے  باوجود  کہیں  سے  کوئی  منظم  صدائے  احتجاج  تک  سننے  کو  نہیں  ملی۔  اس  کو  بے  حسی  کہیں  یا  اپنی  بد  بختی   کہ  اپنی  بربادیوں  پر  اف  تک  نہیں  کرتے؟

وائے ناکامی متاع کارواں جاتا رہا
کارواں کے دل سے احساس زیاں جاتا رہا

الٹا  ہمیں  کہا  جاتا  ہے  کہ  صدائے  لائبریرین  حساس  ہے۔  ارے  بھائی  ،صدائے  لائبریرین  اس  لئے  حساس  ہے  کیونکہ  آپ  بے  حس  اور  پتھر ہو  چکے۔  بقول  علامہ  اقبال رحمتہ  اللہ  علیہ  :

اگرچہ بت ہیں جماعت کی آستینوں میں
مجھے ہے حکم اذاں، لا الہٰ الا اللہ​

ہم    بشرط    زندگی  اذان  دیتے  رہیں  گے۔

اس  سہ  ماہی  کے  دوران  لاہور  میں  پی  ایل  اے  پنجاب  اورپنجاب  یونیورسٹی    کے    ڈیپارٹمنٹ  آف  انفارمیشن مینجمنٹ نے یکے بعد  دیگرےکانفرنسیں  منعقدکروائیں۔ان  کانفرنسوں  کے  کامیاب  انعقاد  پر  پی  ایل  اے  پنجاب  اور  ڈیپارٹمنٹ  آف  انفارمیشن  مینجمنٹ  مبارکباد  کے  مستحق  ہیں۔  اس  حوالے  سے  مستقبل  کے  لئے  ہماری  کچھ  گزارشات  حسب  ذیل  ہیں:

۔  اگر  اس  طرح  کے  پروگرام  پی  ایل  اے  ہیڈ  کوارٹر  کروائے  اور  باقی  تمام  پروفیشنل  گروپس  اور  لائبریری  سکولز  اس  کے  ساتھ  شانہ  بشانہ  کھڑے  ہوں  تو  اتحاد  اور  یگانگت  کا  ایک  مضبوط  پیغام  معاشرے  کے  تمام  طبقات  کو  مہیا  کیا  جا  سکتا  ہے۔

۔ان  کانفرنسوں  میں  شرکاء  کی  کثیر  تعداد  ورکنگ  لائبریرینز  کی  ہوتی  ہے  لیکن  کانفرنس  کے  دوران  پڑھے  گئے  پیپرز  یا  بحث  و  تمحیص کا  تعلق  زیادہ  تر    تحقیق  و  تعلیم  سےمتعلقہ موضوعات  پر  ہوتا  ہے  جس  سے  ان  شرکاء  کے  اندر  لامحالہ  احساس  محرومی  کے  جذبات  پروان  چڑھتے  ہیں۔کانفرنس  کے  مقررین  کو  چاہئے  وہ  اپنے  موضوعات  کے  انتخاب  کے  دوران  اس  طبقہ  کو  مد  نظر  رکھیں۔

۔کانفرنس  کے  موضوعات  زیادہ  تر  نظریاتی  ہوتے  ہیں ۔  عملی  مسائل  کی  طرف  بالکل  بھی  توجہ  نہیں  دی  جاتی۔عملی  موضوعات  کا  انتخاب  ان  کانفرنسوں  کو  زیادہ  مفید  بنا  سکتا  ہے۔

۔آخری  اور  اہم  ترین  بات  ۔ان  کانفرنسوں  میں  غیر  ملکی  شرکاء  کی  تعداد  پندرہ  بیس  سے  زیادہ  نہیں  ہوتی  ۔  ان  غیر  ملکیوں  میں  بھی  زیادہ  تر  انڈین  ہوتے  ہیں  جن  کی  سرکاری  زبان  ہندی  بولنے  میں  اردو  سے  ملتی  جلتی  ہے۔باقی  چار  پانچ  لوگ  ایسے  ہوتے  ہیں  جو  اردو  کو  سمجھ  نہیں  سکتے۔ان  چار  پانچ  لوگوں  کی  خاطر  ان  کانفرنسوں  کی  زبان  انگریزی  کر  دی  جاتی  ہے۔ہمارا  نہیں  خیال  کہ  یہ  چار  پانچ  لوگ  کانفرنس  کے  تمام  سیشنز  اٹینڈ  بھی  کر  پاتے  ہوں  گے۔اردو  زبان  کے  ساتھ  اس  سلوک  کو  کیا  کہا  جائے؟یہ  کیسا  کمپلیکس  ہے؟یہ  جانتے  ہوئے  بھی  کہ    اردو  تحقیق  کا  بار  گراں  اٹھا  سکتی  ہے،  یہ  جانتے  ہوئے  بھی  کہ  اردو  کےنفاذ  کے  حوالے  سے  سپریم  کورٹ  آف  پاکستان  کا  واضح  فیصلہ  آچکا  ہے  ،    یہ  جانتے  ہوئے  بھی  کہ    دنیا  کے  تمام  ترقی  یافتہ  ممالک  نے  ترقی  صرف  اپنی  زبانوں  کو  فروغ  دے  کر  کی  ہے،  یہ  جانتے  ہوئے  بھی  کہ  اردو  ہماری  شناخت  ہے  اور  یہ  جانتے  ہوئے  بھی  کہ  خدا  بھی  جب  اپنے  بندوں  سے  ہمکلام  ہوتا  ہے  تو  انہی  کی  زبان  میں  پھر  بھی  ۔۔۔۔؟؟؟

ایک ہم ہیں کہ لیا اپنی ہی صورت کو بگاڑ
ایک وہ ہیں جنہیں تصویر بنا آتی ہے

پس  تحریر:   محترم  ڈاکٹر  غنی  الاکرم  سبزواری  صاحب  نے  اپنے  مئوقر  تحقیقی  جریدے  کے  اداریے  میں  سہ  ماہی  صدائے  لائبریرین  کےگذشتہ  شمارے  کے  اداریے  کے  بارے  میں  تعریفی  کلمات  ادا  کئے  ہیں  ۔ہمارے  نقطہ  نظر  کی  حمایت  کرنے  پر  صدائے  لائبریرین  ان  کا  تہہ  دل  سے  ممنون  ہے  اور  ان  کی  صحت  وسلامتی  کے  لئے  دعا  گو  ہے۔

میگزین پڑھنے یا ڈاؤن لوڈ کرنے کے لئےتصویر پر کلک کریں

Leave a Reply

Your email address will not be published.