unnamedاسلام آباد ( ۱۷اگست ۲۰۱۵ء) نوجوان اس ملک کا قیمتی اثاثہ ہیں مگر بدقسمتی سے انھیں صحیح راستے سے بھٹکا نے کی کوشش کی گئی۔ نوجوانوں کے لیے پیغام ہے کہ وہ واپس آکر اپنے ملک و قوم اور اپنے خاندان کی خدمت کریں اور کتاب سے محبت کریں کیوں کہ کتاب بھٹکے ہوئے ذہنوں اور گمراہ لوگوں کو سیدھا اور روشن راستہ دکھاتی ہے۔ ان خیالات کا اظہار سدرن کمانڈر کوئٹہ لیفٹیننٹ جنرل ناصر خان جنجوعہ نے نیشنل بُک فاؤنڈیشن کے زیر اہتمام جشنِ آزادی کے سلسلے میں منعقدہ سات روزہ قومی کتاب میلے کی افتتاحی تقریب کے شرکاء سے چیف گیسٹ کی حیثیت سے کیا۔ انھوں نے کہا کہ یہ کتاب میلہ نوجوانوں کو ایجوکیٹ کرنے میں معاون ثابت ہو گا۔ تقریب کی نظامت ملک فدا الرحمان نے کی اور کہا کہ اب سر زمینِ بلوچستان میں کتابوں سے بھرے ہوئے ٹرک آیا کریں گے۔ نیشنل بُک فاؤنڈیشن کے مینیجنگ ڈائریکٹر پروفیسر ڈاکٹر انعام الحق جاوید نے کہا کہ این بی ایف کی مفید و معلوماتی اور کم قیمت کتب کے ذریعے ہم ’’بُک ریوولیوشن ‘‘ کی طرف بڑھ رہے ہیں ۔ بلوچستان یونیورسٹی کے وائس چانسلر ڈاکٹر جاوید اقبال اور یونیورسٹی لا کالج کوئٹہ کے پرنسپل بیرسٹر امان اللہ اچکزئی نے میلے کے افادی پہلوؤں کا ذکر کیا اور کہا کہ آج پہلے سے بڑھ کر قومی یکجہتی کی ضرورت ہے۔این بی ایف کے تعاون سے منعقدہ اس پُروقار قومی میلے میں اساتذہ ، خواتین ، نوجوانوں ، طلبہ و طالبات اور سوشل میڈیا کے لوگوں نے بڑی تعداد میں شرکت کی۔

تقریب کے آخر میں نیشنل بُک فاؤنڈیشن کی جانب سے چیف گیسٹ لیفٹیننٹ جنرل ناصر خان جنجوعہ ، سردار بہادر خان وومن یونیورسٹی کی وائس پرنسپل رخسانہ جبیں ، ڈاکٹر جاوید اقبال اور بیرسٹر امان اللہ اچکزئی کو خصوصی شیلڈز پیش کی گئیں جب کہ یونیورسٹی لا کالج کی طرف سے ایم ڈی ڈاکٹر انعام الحق جاوید کو شیلڈ دی گئی۔