امریکہ میں اس وقت قریباً ایک لاکھ تئیس ہزار سے زیادہ عوامی کتب خانے ہیں اور بڑے کتب خانوں میں کتابوں کی تعداد کروڑوں میں ہے‘ امریکہ کی دس بڑی لائبریریوں میں کتابوں کی تعداد بارہ کروڑ سے زیادہ ہے‘ سب سے بڑی لائبریری کانگرس لائبریری ہے جس میں سوا تین کروڑ کے قریب کتب موجود ہیں
چین میں اکاون ہزار سے زیادہ پبلک لائبریریوں میں پینتالیس کروڑ سے زیادہ کتب موجود ہیں‘ چین کی سب سے بڑی لائبریری نیشنل لائبریری آف چائنا میں دو کروڑ ساٹھ لاکھ کتب موجود ہیں‘ جاپان میں پبلک لائبریریوں کی تعداد بتیس سو سے زیادہ ہے اور ان میں بتیس کروڑ سے زیادہ کتب موجود ہیں
بھارت میں تیس ہزار سے زیادہ پبلک لائبریریوں میں چار کروڑ کے قریب کتب موجود ہیں‘پاکستان میں کل چار سو پبلک لائبریریوں میں ساڑھے آٹھ لاکھ کے قریب کتب ہیں‘یہی وجہ ہے کہ عام پڑھا لکھا پاکستانی اسکول میں غلط سلط اور تنگ نظر تصورات بنا لیتا ہے پھر ساری زندگی بہتری کی کوئی گنجائش نہیں رہتی
نیشنل لائبریری آف پاکستان میں قریباً ایک لاکھ تیس ہزار کتب موجود ہیں‘ یہ قومی سطح کی لائبریری ہے مگر ناکوں کے شہر اسلام آباد میں علم کے متلاشی اس چشمے سے فیض یاب ہونے کی شاید ہی ہمت کریں اورجو ’’ڈھیٹ حضرات ‘‘تفتیش کے عمل سے گزر کر یہاں پہنچ بھی جائیں تو انہیں یہاں کا بیوروکریٹک ماحول اور مطالعہ کتب کے اوقات کار ہی جلد ’’آسودہ ‘‘کردیں گے۔
lib2
ریڈیو پاکستان والے چوک میں اسلام آباد پولیس کا ناکہ تھا۔ سپاہی نے ہاتھ دیا تو میں نے گاڑی روک لی۔۔۔کہاں جا رہے ہیں؟؟؟ سپاہی نے گویا لٹھ ماری۔۔۔میرا جواب سادہ تھا۔۔۔نیشنل لائبریری‘ مگر اگلا سوال پہلے سے کہیں مشکل تھا۔۔۔ کیوں؟؟؟ ابھی میں سوچ ہی رہا تھا کہ اس کیوں کا کیا جواب دوں کہ فرنٹ سیٹ پر بیٹھے میرے دوست نے میڈیا کا کارڈ دکھایا تو ہمیں آ گے جانے کی اجازت مل گئی۔۔۔ ہماری منزل پاکستان کا قومی سطح کا سب سے بڑا کتب خانہ تھا۔ نیشنل لائبریری کے مرکزی دروازے سے اندر داخل ہوئے تو ہو کا عالم طاری تھا‘ استقبالیہ پر بیٹھے شخص نے ہمیں سر سے لیکر پیر تک یوں دیکھا جیسے ہماری ذہنی حالت پر شک ہو۔ میں نے ڈرتے ڈرتے مدعا بیان کیا۔۔۔ کچھ کتابیں دیکھ سکتے ہیں؟؟؟ جواب ملا‘ کل آئیں‘ لائبریری کا وقت ختم ہوچکا ہے۔۔۔ میں نے حیرت سے دوست کی جانب دیکھا تو اس نے میڈیا کا حوالہ دیتے ہوئے اپنے طریقے سے درخواست کی۔۔۔ استقبالیہ پر بیٹھے شخص نے گویا ہماری سات پشتوں پر احسان کرتے ہوئے لائبریری کے اندر جانے کی اجازت مرحمت فرمائی تو ہم پر حیرت کے سمندر ٹوٹ پڑے اورمیں یورپ کی ترقی کا راز کھوجنے لگ گیا۔۔۔

tumblr_md2l668xff1qdo62to1_500
جب یورپ اپنے صدیوں پر محیط سیاہ دور سے نشاۃ ثانیہ کا سفر طے کر رہا تھا تو وہاں علم کی عزت اور توقیر شروع ہو رہی تھی اور ہمارے ہاں علم کی بے توقیری بڑھ رہی تھی۔ انگلستان کی آکسفورڈ یونیورسٹی1157ء اورکیمبرج یونیورسٹی 1207ء کو قائم کی جا چکی تھیں اور ان یونیورسٹیوں کی ویل باؤرن کے قریب فرانسس ٹرائج لائبریری قائم ہوئی۔ 1608ء کو ناروچ سٹی لائبریری قائم ہوئی۔ اس کے بعد چھوٹی بڑی لائبریریوں کا سلسلہ پورے انگلستان میں پھیل گیا۔ علم کی قدر اور فروغ کی عمل ا علمی خدمات نے نہ صرف انگلستان بلکہ پوری دنیا کا نقشہ بدل کے رکھ دیا۔ یونیورسٹیوں کے ساتھ ساتھ کتب خانوں کا قیام سولہویں صدی عیسوی سے شروع ہو چکا تھا۔159نگلستان کے عالمی طاقت بننے سے کئی صدیوں پہلے شروع ہو چکا تھا۔اٹلی میں پہلی لائبریری میلاٹیسٹا 1452ء میں قائم ہو چکی تھی۔جب یورپ کی سفید فام نسل نے امریکہ ‘کینیڈا‘ آسٹریلیا اور نیوزی لینڈ آباد کئے تو وہاں بھی فوری طور پر لائبریریوں اور یونیورسٹیوں کا ایک سلسلہ شروع کیا۔1636ء میں امریکہ میں ہارورڈ یونیورسٹی کا سنگِ بنیاد رکھا گیا تو 1779ء میں کینیڈا کی پہلی لائبریری کیوبک سٹی میں قائم کی گئی جبکہ اسی عرصہ میں برصغیر میں کوئی بڑی اور قابلِ ذکر یونیورسٹی اور لائبریری تعمیر نہیں ہوئی۔ علم و تحقیق سے جیسے ہمارے ان حکمرانوں کا کوئی واسطہ ہی نہ تھا۔

3515 / AFRICAN-AMERICAN LIBRARY / SMITH & COMPANY ARCHITECTS

سولہویں اور سترہویں صدی میں یورپ اور برصغیر میں جو ترجیحات متعین ہو چکی تھیں ان کا لازمی نتیجہ یورپ کی دنیا پر حکمرانی اور برصغیر اور اس کے حکمرانوں کی رسوائی کی شکل میں نکلنا تھا۔ جیسے سولہویں اور سترہویں صدی کی ترجیحات نے اکیسویں صدی میں ہماری قسمت کا فیصلہ لکھا‘ اسی طرح اکیسویں صدی کی ہماری ترجیحات چوبیسویں اور پچیسویں صدی میں ہماری نسلوں کے مستقبل کی بنیاد رکھ رہی ہیں۔ اگرچہ ایشیاء میں بھی ہمیں ایک نشاۃ ثانیہ کی لہر نظر آ رہی ہے اور صدیوں کی غلامی کے بعد اب ایشیاء دنیا میں برابری کی سطح پر ابھر رہا ہے بلکہ ایشیاء کے بعض ممالک اور قومیں تو عالمی طاقت کے طور پر سامنے آ رہی ہیں لیکن ہمارے ہاں ایشیاء کی اس نشاۃثانیہ کا کوئی اثر نہیں ہوا اور نہ ہی ہمارے اندر ایسی کوئی تحریک یا لہر نظر آ رہی ہے جس سے امید کی کرن پیدا ہو سکے لیکن ہماری حالت یہ ہے کہ ہمیں احساس تو کیا احساسِ زیاں تک نہیں ہے۔
دنیا کی واحد سپر پاور امریکہ میں اس وقت قریباً ایک لاکھ تئیس ہزار سے زیادہ عوامی کتب خانے ہیں اور بڑے کتب خانوں میں کتابوں کی تعداد کروڑوں میں ہے۔ امریکہ کی دس بڑی لائبریریوں میں کتابوں کی تعداد بارہ کروڑ سے زیادہ ہے۔ سب سے بڑی لائبریری کانگرس کی لائبریری ہے جس میں سوا تین کروڑ کے قریب کتب موجود ہیں۔ اس لائبریری کا سب سے بڑا مقصد یہ ہے کہ امریکہ کے منتخب نمائندوں کے پاس یہ سہولت ہونی چاہئے کہ اگر انہیں دنیا کی کسی بھی کتاب کی ضرورت پڑ جائے تو انہیں فوری طور پر دستیاب ہو سکے اور ماشاء اللہ ہمارے بیشتر منتخب نمائندوں کو تو کتابوں کی ضرورت ہی نہیں پڑتی۔ ہمارے منتخب نمائندوں کو تو کام چلانے کیلئے ایس ایچ او‘ پٹواری اور دو چار سرمایہ لگانے والے رفقاء ہی کافی ہیں۔چین میں اس وقت اکاون ہزار سے زیادہ پبلک لائبریریوں میں پینتالیس کروڑ سے زیادہ کتب موجود ہیں۔ چین کی سب سے بڑی لائبریری نیشنل لائبریری آف چائنا میں دو کروڑ ساٹھ لاکھ کتب موجود ہیں۔ جاپان میں کل پبلک لائبریریوں کی تعداد بتیس سو سے زیادہ ہے اور ان میں بتیس کروڑ سے زیادہ کتب موجود ہیں۔ 2010ء میں پانچویں جماعت تک کے جاپانی بچے نے ان لائبریوں میں سے اوسطاً چھبیس کتابیں دیکھیں۔ بھارت میں 1957ء میں ڈاکٹر اے پی سنہا کی سربراہی میں ایڈوائزی کمیٹی آف لائبریریز بنی۔ حالیہ اندازوں کے مطابق بھارت میں تیس ہزار سے زیادہ پبلک لائبریریوں میں چار کروڑ کے قریب کتب موجود ہیں۔ اب ذرا دل تھام لیجئے‘پاکستان میں کل چار سو پبلک لائبریریوں میں ساڑھے آٹھ لاکھ کے قریب کتب ہیں۔
یہی وجہ ہے کہ ایک عام پڑھا لکھا پاکستانی اسکول میں غلط سلط اور تنگ نظری پر مبنی جو تصورات بنا لیتا ہے ان میں پھر ساری زندگی بہتری کی کوئی گنجائش نہیں رہتی۔

LibraryReadingRoom-565x375
جہاں امریکی کانگریس کی لائبریری میں دنیا جہان کی سیکڑوں قوموں کی ہزاروں زبانوں میں لکھی جانے والی کروڑوں کتب موجود ہیں وہیں مجھے پاکستان کے ایک انتہائی اہم مدرسے کے مفتی صاحبان کا کتب خانہ دیکھنے کا موقع ملا۔ مجھے تو اپنی آنکھوں پر یقین نہیں آیا۔ عالمی استعماری اور طاغوتی طاقتوں کو شکست دینے کیلئے فکری جہاد جاری رہتا ہے‘اس متعلقہ کتب خانے میں چند سو سے زیادہ کتابیں موجود نہیں تھیں۔ میرے اندازے کے مطابق امریکی کانگریس کی لائبریری میں اس درس گاہ کے مفتی صاحبان کے کتب خانے میں موجود اسلام پر مستند ترین کتابوں سے ہزاروں گنا زیادہ کتابیں موجود ہوں گی۔ اسلام آباد میں کتب خانوں کی حالت اتنی ناگفتہ بہ ہے کہ بیان سے باہر ہے۔ پاکستان کے دارالحکومت میں ایک نیشنل لائبریری آف پاکستان ہے جس میں قریباً ایک لاکھ تیس ہزار کے قریب کتب موجود ہیں۔ یہ لائبریری پاکستانی معیار کے مطابقِ ’’مناسب‘‘ سہولتوں سے آراستہ ہے۔ جیسا کہ نام سے ظاہر ہے یہ ایک قومی سطح کی لائبریری ہے مگر ناکوں کے شہر اسلام آباد میں علم کے متلاشی اس چشمے سے فیض یاب ہونے کی شاید ہی ہمت کریں اورجو ’’ڈھیٹ حضرات ‘‘تفتیش کے عمل سے گزر کر یہاں پہنچ بھی پائیں تو انہیں شایدیہاں کا بیوروکریٹک ماحول اور مطالعہ کتب کے اوقات کار ہی جلد ’’آسودہ ‘‘کردیں۔۔۔ پاکستان کے دارالحکومت کی پبلک لائبریریوں کی مجھے بڑے عرصے سے تلاش تھی۔ آج تک پبلک لائبریری تو نہیں ملی لیکن کچھ روز پہلے مجھے معلوم ہوا کہ اسلام آباد میں پانچ چھ چھوٹی چھوٹی کمیونٹی لائبریریاں موجود ہیں‘ یہ جان کر بہت خوشی ہوئی۔سو اپنے گھر کے قریب ایف الیون کی لائبریری دیکھنے چلا گیا۔ لائبریری کیا ہے‘ ایک چھوٹا سے ہال ہے جس میں چارپانچ ہزار کے قریب کتب بے ترتیبی سے پڑی ہیں۔ نہ کوئی کیٹلاگ‘نہ کوئی ڈھنگ کی بیٹھنے کی جگہ‘کچھ کمپیوٹر ڈبوں میں بند پڑے ہیں۔ پنکھا چلانے کی کوشش کی تو معلوم ہوا کہ 2010ء سے اس کی بجلی ٹرانسفارمر جلنے کی وجہ سے منقطع ہے اور پانی یا گیس کا تو کبھی کنکشن ملا ہی نہیں۔ ایک اسسٹنٹ ڈائریکٹر لائبریرین ہے جو خود ہی اسٹاف بھی ہے‘ نائب قاصد بھی‘ صفائی کرنے والا بھی اور چوکیدار بھی۔ یہ بھی معلوم ہوا کہ پچھلے مہینے قریبی مزار کے لوگ آئے تھے اور لائبریری خالی کرنے اور چابی ان کے حوالے کرنے کی فرمائش کرنے لگے کہ ان کے بقول وہ سرکاری جگہ ان کی ملکیت بن چکی تھی۔ لائبریری کے سامنے اپنے گیٹ بھی نصف کر چکے تھے اور قبضہ قریباً مکمل تھا کہ سی ڈی والے ایک دن ان کا گیٹ اکھاڑ کر چلے گئے۔اس لائبریری کے اوسط قارئین کی تعداد پانچ چھ کے قریب ہے۔ مزید معلوم ہوا کہ جی ایٹ اور آئی ٹین کی کمیونٹی لائبریریوں کی بجلی بھی اسی طرح منقطع ہے۔

۔۔۔گھر واپسی پر میں یہ سوچ رہا تھا کہ ہم کیسی قوم ہیں ۔۔۔ہماری زندگیوں سے پہلے’’ آرٹ ‘‘نکلا تو ہمارے’’ سینما گھر ‘‘ویران ہوگئے۔ پھر’’ کھیل ‘‘میں سیاست آئی تو ہمارے ’’میدان ‘‘اجڑنے لگے۔ لگتا ہے اب اگلی باری ’’کتب خانوں‘‘ کی ہے جو چوبیس گھنٹوں میں سولہ گھنٹے ’’بند ‘‘رہتے ہیں۔ ہم نے اپنے ’’ اوقات کار ‘‘ تبدیل نہ کئے تو آنے والی صدیوں میں ہمارے ساتھ کیا ہونے والا ہے‘ اس کا اندازہ لگانا چنداں مشکل نہیں۔

Courtesy: http://javedch.com/