laib.pix_کوٹ سلطان :۔ضلع کونسل کی جانب سے قائم کی گئی لائبریری آخری سانسیں لے رہی ہے ،نایاب اور نادر کتب کے علم کے خزانہ دیمک کی نظر ،لاکھوں روپے کی قیمتی کتب کو واٹرپیوریفیکیشن پلاٹ کے سٹو ر روم سے باز یاب کرایا جائے کتاب دوست حلقوں کا مطالبہ ۔تفصیل کے مطابق سابقہ ادوار میں ضلع کونسل کی جانب سے کوٹ سلطان میں ایک پبلک لائبریر ی کا قیام عمل میں لایا گیا جہاں کتاب دوست اور علم کے متلاشی اپنی تعلیمی پیاس بجھاتے تھے ،مگر انتظامیہ کی عدم دلچسی کی وجہ سے اس عظیم درس گاہ کو بند کر دیا گیا اور لائبریری ہال کو ووکیشنل کالج کو دے دیاگیا جبکہ لائبریری کی نادر کتب کو ہال کے ساتھ قائم کیے گئے سٹور روم میں ڈال دیا گیا جہاں سے ان قیمتی اور نایاب کتب کی بڑی تعداد بااثر افراد لے گئے اور سینکڑوں قیمتی کتب انتظامیہ نے فروخت کر کے اپنی جیبیں بھر لیں ،بعد ازاں لائبریری کو پرانے لائبریری کے سٹور روم سے بھی غائب کر دیا گیا ،جبکہ باقی کی کتب اس وقت تھانہ کوٹ سلطان کے قریب قائم واٹر پیوریفیکیشن پلاٹ کے سٹور روم میں انتہائی خستہ حالی کا شکا ر ہو رہی ہیں ان نایاب اور قیمتی کتب کو انتہائی غیر توجہ اور اس قدر بے رحمی کے ساتھ رکھا گیا ہے کہ ان میں سے اکثر نایاب کتب تو دیمک کی نظر ہوچکی ہیں جبکہ کے باقی کی کتب اپنی آخری سانسیں لے رہی ہیں ،انتظامیہ کی غفلت اور عدم توجہ کے سبب کئی نایاب اور قیمتی نسخے ضائع ہو چکے ہیں ،قیمتی اور نادر کتب کو انتہائی بد حالی کی صورت میں رکھا گیا ہے جن پر منوں مٹی اور گرد جم چکی ہے واٹر پیوریفیکیشن پلانٹ پر رکھی یہ کتب د مک اور خستہ حالی کا شکار ہو رہی ہیں،کتاب دوست افراد ،شعراء کرام ، ادیبوں اور سماجی حلقوں نے ارباب اختیار سے فوری طور پر ان نادر کتب کی بازیابی کا مطالبہ کیا ہے اور اپنے آباء کے ان سنہری موتیوں کو نسل نوع تک پہنچانے کی بھر پور التماس کی ہے ۔