ebookکراچی: معروف شاعر اور اردو داب کے مشہور ناقد سحرانصاری نے کہا ہے کہ اردو کے فروغ کے لئے ہر ایک کو اپنا چراغ خود جلانا ہوگا۔ اکیسویں صدی میں دیگرا قوام سے علمی میدان میں مقابلے کے لئے پرانے ہتھیار نہیں چلیں گے ۔دور حاضر کے ادباء، شعراءاور لکھاری قلم کے ساتھ ساتھ جدید ٹیکنالوجی میں بھی مہارت حاصل کریں۔ ان خیالات کا اظہار انہوںنے گزشتہ روزآرٹس کونسل کراچی میں ہماری ویب، رائٹر کلب کے تحت پہلی ای بک کی تقریب رونمائی کے دوران گفتگو کرتے ہوئے کیا۔اس موقع پرہماری ویب کے بانی ابرار احمد، رائٹر کلب کے صدر ڈاکٹر رئیس حمدانی، جنرل سیکریٹری عطا محمد تبسم اور دیگراراکین بھی موجود تھے۔ تقریب رونمائی میں کالم نگاروں، رائٹرز سمیت مرد وخواتین کی بڑی تعداد نے شرکت کی۔ اس موقع ہماری ویب کے 19 لکھاریوں کو تعریفی اسناد دی گئیں۔ تقریب سے خطاب کرتے ہوئے سحر انصاری نے کہا کہ ہمیں ذاتی طورپر اپنی تہذیب اور زبان کے لئے کام کرنے کی ضرورت ہے ۔اداروں کی معاونت کا انتظار کئے بغیر جدید ٹیکنالوجی سے خود کو ہم آہنگ کرنا ہوگا۔مسابقت کے اس دور میں جدید ٹیکنالوجی کوادب کی ترویج و اشاعت اور زبان کی ترقی کے فروغ کے لئے استعمال کرنا وقت کا تقاضا ہے کیونکہ ہم اکیسویں صدی کے ہتھیار سے لیس ہوکر ہی بھرپور ثقافتی جنگ لڑسکتے ہیں ۔تقریب سے خطاب کرتے ہوئے دیگر مقررین نے کہا کہ ہماری ویب نئے لکھنے والوںکے لئے ٹریننگ سینٹر کا کردار ادر کرتی آئی ہے ۔رائٹر کلب فورم کی تشکیل اور ای بک کا اجراءٹیکنالوجی کی دنیا میں قدم سے قدم ملانے کی ایک کاوش ہے ۔معاشرے میںادب کے فروغ کے لئے علمی و ادبی سرگرمیوں کو ترجیح فوقیت دینا ہوگی۔انہوںنے کہا کہ اردو دنیا کی سب سے زیادہ بولی جانے والی زبانوں میں نمایاں مقام رکھتی ہے ۔ماضی کی بہ نسبت انٹرنیٹ پر اردومواد میں خاطر خواہ اضافہ ہوا ہے ۔ہماری ویب انٹرنیٹ کی دنیا میں تمام تر خدمات کو بروئے کار لائے ہوئے ہیں ۔آنے والے دنوں میں اردو کی سب سے بڑی آن لائن ڈکشنری کا قیام عمل میں لایا جائے گا۔